Wednesday, August 28, 2013

Awami Villas - A project of Bahria Town Pvt. Ltd.: A good investment option

Bahria Town management launched its Awami Villas project on Pakistan Independence day - August 14, 2005. These were the last days of previous property boom and soon after that property rates went deep down until situation started improving last year.

Now when we analyse the situation of that time, it seems that Malik Riaz Hussain (then Chairman Bahria Town Pvt. Ltd.) and his team had an idea of property's problematic future. They launched this low cost project in installments to target that neglected segment of investors who had saving of only Lac Rupees or so.

Awami Villas was introduced as a mega project of Bahria Town. Malik Riaz Hussain's articles appeared in daily Jinnahh about the details of this project and his social welfare ideas behind this project. House Building Finance Corporation Ltd (HBFC) of Pakistan shown its involvement in Awami Villas. It was thought that Awami Villas project would bring a revolution in House Building in Pakistan.

Awami Villas were introduced in two categories:
  1. Standard Quality Villas - Rs.3.5 Lac
  2. Premimum Quality Villas - Rs.5 Lac
  3. Upgrade Quality (it was added later)
The model houses are launched in Lahore and Rawalpindi. CM Pervaiz Elahi visited Awami Villas Rawalpindi to boost up the project. As usual the investors as well as common man invested hugely in it.

The owner of Awami Villas kept on paying installments but there was no sign of balloting till 2008. Many people left paying further installments and in the result of it, Bahria Town cancelled hundreds of Awami Villas memberships in 2008 and sent the post dated cheque of received amount after deduction of 20%.

Many ups and down came and investors lost interest in the project though it was a small investment and showing growth. Bahria Town also gave possession of 100 Awami Villas in Rawalpindi which gave some hope to the members. And they also announced location and master plan in Lahore.

Bahria Town could not maintain the momentum and Awami Villas project remained a neglected one. Recently some Awami Villas are delivered in Bahria Orchard. These are not fabricated houses as were announced on the time of launch. Even then the project could not attract new investors. All of its direct publicity has been finished including its dedicated website. Bahria Town has provided only a page on its main and official website and links over there are not in working condition any more.

On December 31, 2012, the rate of Awami Villas was around Rs.9 Lac. It is now being informed that Awami Villas Project would be located in Bahria Orchard and the old Master Plan is no more active now. It seems that Bahria Town will be delivering Awami Villas in the form of apartments instead of on ground constructed homes.
The rates of Awami Villas have started improving gradually now. During last couple of months it gained at least Rs.5 Lac on total investment of only One Million Rupees.

In my opinion Awami Villas project is one of the best investment due to
  • Small investment
  • Low Risk Investment
  • A project of Bahria Town
Whether Awami Villas would be a two bed room house on 5 Marla plot or as an apartment, the residents would be taking all the benefits and advantages of Bahria Town's facilities. In both cases, when delivered its worth would not be less than Rs.20 Lac. The rate may be even on higher side.

The prevailing rate for Premier Standard Villas, nowadays, is around Rs.14 Lac and it is increasing gradually.

To read more about Awami Villas Project, You may Click HERE for knowing further about Awami Villas Project.

Lahore Property Rates Update From Lahore Real Estate August 28, 2013

DHA Lahore Phase 9 File 5 Marla= You Can Sell For 20.50 & Buy For 20.75 Lacs
DHA Lahore Phase 9 File 10 Marla= You Can Sell For 37 & Buy For 37.50 Lacs
DHA Lahore Phase 9 File 1 Kanal = You Can Sell For 51.25 & Buy For 51.50 Lacs

DHA Lahore Phase 9 Extension File 10 Marla Available For 26.50 Lacs
DHA Lahore Phase 9 Extension File 1 Kanal Available For 36.50 Lacs

(Please Note: These rates are only valid at the PK time of this post, mentioned above. File rates vary throughout the day, and are subject to change according to market conditions i.e.Supply and Demand at that particular time. Sometimes file prices can move by 50 To 100 thousand in less than an hour. To Buy/Sell or to check current rates please call: 03224009766 Or 03004009766)

DHA Lahore Phase 1-2-3-4 Ready Plots Available 5 Marla= 45 To 60, 10 Marla= 80 To 95, 1 Kanal= 125 To 200, 2 Kanal = 300 To 525 Lacs
DHA Lahore Phase 5 Ready Plots Available 5 Marla= 50 To 60, 10 Marla= 100 To 125, 1 Kanal= 150 To 225,2 Kanal =400 To 550 Lacs
DHA Lahore Phase 5 M Block Plots (Development Started) 1 Kanal = 78 To 95 Lacs
DHA Lahore Phase 6 Ready Plots Available 5 Marla= 36 To 50, 10 Marla= 75 To 95, 1 Kanal= 110 To 175, 2 Kanal = 275 To 400 Lacs
DHA Lahore Phase 7 Plots Available (Be Ready Soon) 10 Marla= 48 To 58, 1 Kanal =75 To 120, 2 Kanal = 170 To 200 Lacs.
DHA Lahore Phase 8 Plots Available (Development Started) 5 Marla= 33 To 35, 10M = 58 To 68, 1K= 85 To 155 Lacs
DHA Lahore Phase 9 (A, B, C And D Blocks) Plots Available (Under Development,70% Complete) 5 Marla= 30 To 37, 8m = 42 To 55 , 10 Marla= 70 To 75 Lacs
DHA Parkview Lahore Ready Plots Available . 10 Marla= 68 To 78, 1 Kanal= 90 To 135, 2 Kanal = 160 To 250 Lacs
DHA Lahore Phase 1 To 8 Commercial Plots Available 2m= 70 To 130, 4m= 170 To 500, 8m= 275 To 1300 Lacs
DHA Lahore Phase 1 To 6 Houses Available 5 Marla=75 To 105, 10 Marla=125 To 185, 1k= 175 To 350, 2 Kanal = 425 To 750 Lacs
DHA Rahbar Lahore Ready Plots Available 5 Marla= 13 To 24, 10 Marla= 36 To 46 , 1 Kanal= 50 To 75 Lacs
DHA EME Sector Lahore Phase 1 Ready Plots Available 5 Marla = 35 To 40, 10 Marla= 75 To 85, 1 Kanal= 100 To 160, 2 Kanal = 275 To 325 Lacs
DHA EME Sector Lahore Phase 2 (Formerly DHA City Lahore) Plot Files Available 5 Marla= 10.25, 10 Marla= 19.80, 1 Kanal= 37.50 Lacs

Bahria Town Lahore Sector A Plots Available 10 Marla= 40 to 50, 1 Kanal = 65 To 85, 2 Kanal = 125 To 175 Lacs
Bahria Town Lahore Sector B Plots Available 5 Marla=26 To 34, 10 Marla= 48 To 60 1 Kanal= 75 To 110 Lacs
Bahria Town Lahore Sector C Plots Available 10 Marla= 35 To 57, 1 Kanal= 65 To 95, 2 Kanal = 150 To 175 Lacs
Bahria Town Lahore Sector D Plots Available 5 Marla= 22 To 29 Lacs
Bahria Town Lahore Overseas Enclave A+B Plots Available. 10 Marla= 45 To 57, 1 Kanal= 75 To 95 Lacs
Bahria Orchard Lahore Plots Available 5 Marla= 14 To 16 10 Marla= 20 To 32 Lacs
Bahria Nasheman Lahore Plots Available 5 Marla= 13 To 14, 8m= 19 To 23 Lacs
Bahria Town Awami Villa Lahore Available= 13.5 To 14 Lacs
Bahria Town Lahore Villas & Houses Available 5 Marla=55 To 65, 8m = 75 To 85, 10 M= 100 To 130 Lacs
Bahria Town Lahore Ready Commercial Plots Available 5 Marla = 140 To 240, 8m= 275 To 300 Lacs

Eden City Lahore Ready Plots Available... 10 Marla= 45 To 65, 1k= 65 To 110 Lacs, 2k= 150 To 210 Lacs
Central Park Lahore Ready Plots Available 10 Marla= 14 To 25, 1 Kanal= 30 To 42, 
Fazaia Lahore Ready Plots Available 10 Marla= 22 To 27, 1 Kanal= 45 To 65 Lacs
NFC Phase 2 Lahore Plots Available (Under Development) 5 Marla= 8 To 12, 10 Marla= 14 To 22, 1 Kanal= 28 To 37 Lacs ( All Dues Clear)
Park View Villas Multan Road Ready Plots Available 5 Marla= 20 To 28, 10 Marla= 30 To 40 Lacs.
Lake City Lahore Ready Plots Available 5 Marla= 10 To 12, 10 Marla=22 To 25, 1k= 40 To 55 Lacs.
State Life Lahore Phase 1 Ready Plots Available 5 Marla= 31 To 38, 10 Marla=40 To 48, 1 Kanal= 45 To 75 Lacs.
State Life Lahore Phase 2 Plots Available 5 Marla= 8 To 9, 10 Marla= 12 To 13, 1 Kanal= 17 To 28 Lacs
Valencia Town Lahore Ready Plots Available 10 Marla= 35 To 55, 1 Kanal= 65 To 100, 2 Kanal = 135 To 175 Lacs
Wapda Town Lahore Ready Plots Available 5 Marla= 30 To 40, 10 Marla= 55 To 75, 1 Kanal= 85 To 125, 2 Kanal =200 To 300 Lacs

Rates You Can Trust Are Provided By:
Lahore Real Estate Pvt Ltd Is Registered/Authorized Dealer (DHA Lahore, DHA City Lahore, State Life LahoreDivine Developers, Bahria Town, Urban Developers, Park View Villas Multan Road And Many Others). We Are Dealers Of Property Dealers And Serve Large And Small Clients With Same Honesty And Hard Work. Please Note Lahore Real Estate Has Only One Office At 98-Y Commercial, DHA Phase 3 Lahore In Front Of DHA Head Office And Don'T Have Any Affiliations Or Branch Offices. LahoreRealEstate.Com Is The Most Visited Lahore Property Website For Last 9 Year In A Row (2004 To 2012). Beware Of Some Fraudsters & Copycats Estates Trying To Use Our Name Or Look Alike Web Sites & Email Addresses Etc. If They Are Cheating Our Hard Work Shamelessly Be Sure They Will Not Hesitate To Cheat You Too.

042-35692420 Upto 23 0r 042-111-111-040 Call During Office Hours Only 10 Am To 7 Pm Mon To Sat

Adil Saeed
Lahore Real Estate
Mobile:03224009766 (+923224009766)
Mobile:03004009766 (+923004009766)

http://www.LahoreRealEstate.Com Contact Us

Courtesy: Lahore Real Estate

Saturday, August 10, 2013

کیا انشورنس جائز ہے؟ (ایک نقطۂ نظر) ۔ INSURANCE AND ISLAM

جوں جوں معاشی تقاضے بڑھتے جاتے ہیں‘ اس قسم کے استفسارات کی تعداد میں بھی اضافہ ہوتا جاتا ہے کہ بینک کا سود جائز ہے یا ناجائز ‘ زمین بٹائی پر دی جا سکتی ہے یا نہیں‘ روپیہ لگا کر منافع میں حصہ دار بننا کیسا ہے ‘ پراویڈنٹ فنڈ کا منافع لیا جا سکتا ہے یا نہیں‘ انشورنس جائز ہے یا نہیں !!!۔

بات بینک کے سود‘ مضاربت‘ مزارعت‘ انشورنس وغیرہ کی نہیں۔ اصل بات یہ ہے کہ ہمارا موجودہ معاشی نظام ہی غیر قرآنی ہے اور ہم چاہتے یہ ہیں کہ کسی طرح اس غیر اسلامی نظام میں ’’اسلام‘‘ کا پیوند لگا کر اپنے آپ کو مطمئن کر لیں۔ یہ اطمینان فریب نفس سے زیادہ کچھ نہیں۔ کوئی غیر اسلامی نظام‘ پیوند سازی سے اسلامی نہیں بن سکتا۔ لہٰذا‘ غیر اسلامی نظامِ معیشت کو علیٰ حالہٖ رکھتے ہوئے‘ اس قسم کی بحثیں کچھ فائدہ نہیں دے سکتیں۔ اگر قرآن کا معاشی نظام قائم ہوجائے تو اس میں‘ ان میں سے کوئی سوال بھی پیدا نہیں ہوگا۔ آج ان سوالات کی نوعیت اسی قسم کی سمجھئے جیسے(مثلاً) ایک کمیونسٹ ‘ نظامِ سرمایہ داری کے تحت زندگی بسر کرتے ہوئے پوچھے کہ میں ذاتی جائیداد بنا سکتا ہوں یا نہیں؟

 اب انشورنس کو لیجئے۔ اس کی ضرورت اس لئے پڑتی ہے کہ ایک شخص سوچتا ہے کہ اگر کل کو اس پر کوئی حادثہ گزر جائے تو اس کا (یا اس کی موت کے بعد‘ اس کے بچوں کا) کیا بنے گا؟ قرآن کے معاشی نظام میں کسی شخص کو اس قسم کا خطرہ لا حق ہو ہی نہیں سکتا۔ اس نظام میں ہر ذی حیات کے سامانِ زیست (بنیادی ضروریاتِ زندگی) بہم پہنچانے کی ذمہ داری مملکت پر ہوتی ہے‘ اس لئے اگر کوئی شخص کسی وجہ سے کام کرنے سے معذور ہوجائے تو اسے اس کی فکر ہی نہیں ہو گی کہ وہ کھائے گا کہاں سے یا اگر وہ وفات پا جائے تو اس کے بچوں کا کیا بنے گا۔ لہٰذا‘ اس نظام میں انشورنس کی نہ ضرورت لاحق ہوتی ہے‘ نہ ہی اس کے جائز اور ناجائز ہونے کا سوال پید اہوتا ہے۔ اس میں ہر فرد اپنے اور اپنے بیوی بچوں کے مستقبل کے متعلق ہر طرح سے اَشورڈ  ہوتا ہے۔

لیکن آج (غیر اسلامی نظامِ معیشت میں) صورت یہ ہے کہ اگر کوئی فردِ کاسب (کمائی کرنے والا انسان)‘ کسی وجہ سے کام کاج کرنے سے معذور ہوجاتا ہے‘ یا اس کی موت ایسے حالات میں ہوجاتی ہے کہ اس کے پاس اثاثہ کوئی نہیں ہوتا‘ تو وہ خود اور اس کے بیوی بچے نانِ شبینہ تک کے محتاج ہوجاتے ہیں اور ان بیچاروں کا کوئی پرسانِ حال نہیں ہوتا۔ غیر قرآنی نظامِ معیشت(یعنی نظامِ سرمایہ داری) میں اس صورتِ حال سے بچنے کے لئے انشورنس کی اسکیم رائج کی گئی۔ اس سے‘ بہرحال‘ اس قسم کے واقعات میں‘ زندگی کے دن بسر کرنے کے لئے ایک سہارا مل جاتا ہے۔ اندریں حالات ‘ موجودہ نظام میں‘ اس اسکیم کو غنیمت سمجھنا چاہئے لیکن

!شیخ کہتا ہے کہ ہے یہ بھی حرام اے ساقی

یعنی ہمارے مذہبی پیشوا بجائے اس کے کہ موجودہ نظام کو حرام قرار دیں‘ اس کے اندر اس قسم کی سہولتوں کو حرام قرار دے دیتے ہیں۔ اور جب پوچھا جائے کہ صاحب! اگر یہ شخض انشورنس نہ کرائے اور کل کو اس پر اس قسم کا حادثہ گزر جائے تو اس کا اور اس کے بال بچوں کا کیا بنے گا‘ تو کہہ دیتے ہیں کہ یہ بتانا ہمارا کام نہیں ۔ ہمارا کام تو شریعت کا حکم بتانا ہے۔
یہی سوال قرآن کریم نے بھی اٹھایا تھا جب کہا تھا کہ

أَيَوَدُّ أَحَدُكُمْ أَن تَكُونَ لَهُ جَنَّةٌ مِّن نَّخِيلٍ وَأَعْنَابٍ تَجْرِي مِن تَحْتِهَا الْأَنْهَارُ لَهُ فِيهَا مِن كُلِّ الثَّمَرَاتِ وَأَصَابَهُ الْكِبَرُ وَلَهُ ذُرِّيَّةٌ ضُعَفَاءُ فَأَصَابَهَا إِعْصَارٌ فِيهِ نَارٌ فَاحْتَرَقَتْ كَذَٰلِكَ يُبَيِّنُ اللَّهُ لَكُمُ الْآيَاتِ لَعَلَّكُمْ تَتَفَكَّرُونَ 2:266 

کیا تم میں سے کوئی شخص بھی یہ چاہے گا کہ 

(1) اس کے پاس کھجوروں اور انگوروں کا سرسبز شاداب باغ ہو جس میں پھل بکثرت آئیں۔
(2) وہ بوڑھا ہوجائے اور اس کے چھوٹے چھوٹے بچے ہوں۔
(3) کہ ایسے میں ایسی بادِ سموم چلے کہ اس باغ کو جلا کر راکھ کا ڈھیر بنا دے (اور اس طرح وہ پورے کا پورا کنبہ سامانِ زیست سے محروم رہ جائے)۔
(4) کیا تم میں سے کوئی بھی چاہے گا کہ اس کی ایسی حالت ہو جائے؟
اگر ایسا نہیں چاہتے تو پھر فکر وتدبر کی رو سے دیکھو کہ وہ کونسا قدم اٹھایا جائے جس میں ایسی صورت پیدا نہ ہو۔
ظاہر ہے کہ دنیا میں کوئی شخص بھی ایسا نہیں چاہے گا۔ قرآن نے اس کا اعترا ف کرانے کے بعد (کہ ان میں سے کوئی بھی ایسا نہیں چاہے گا) کہا کہ پھر تم ایسی آفت سے بچنے کا انتظام کیوں نہیں کرتے! اور وہ انتظام یہ ہے کہ تم قرآن کا تجویز کردہ معاشی نظام اپنے ہاں رائج کر لو۔ اس نظام میں کبھی ایسی شکل پیدا نہیں ہوگی۔
قرآنِ کریم نے اس کا یہ حل بتایا اوررسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایسا نظام قائم کرکے دکھایا کہ یہی ان مشکلات کا قرار واقعی حل ہے۔
وہ نظام باقی نہ رہا اور دنیا میں نظامِ سرمایہ داری کا چلن عام ہو گیا۔ اس نظام میں بھی وہی سوال سامنے آیا جسے قرآن سامنے لایاتھا۔ اس نظام کے حاملین نے اس کا حل انشورنس کی صورت میں تجویز کیا۔ اس میں شبہ نہیں کہ یہ حل ویسا نہیں جیسا قرآنِ کریم نے تجویز کیا تھا‘ لیکن موجودہ غلط نظام میں یہ حل‘ جب تک قرآنی حل ممکن نہ ہو بہرحال غنیمت ہے اور دنیا اس سے فائدہ اٹھا رہی ہے۔ لیکن ہماری حالت یہ ہے کہ ہم اپنے ہاں قرآنی حل رائج نہیں کرتے اور دنیا نے جو حل تجویز کیا ہے‘ اسے اپنے اوپر حرام قرار دے لیتے ہیں۔ نتیجہ اس کا ظاہر ہے۔
قرآن نے (مندرہ بالا آیت میں) کہا تھا کہ تم سوچو کہ تمہیں کیا انتظام کرنا چاہیے، جس سے ایسی صورت پیدا نہ ہو سکے۔ لیکن ہمارے ہاں شریعت کے معاملہ میں سوچنے کو حرام قرار دے دیا گیا ہے۔

انشورنس کو ناجائز قرار دینے والے حضرات کی طرف سے دو دلائل پیش کئے جاتے ہیں ۔ ایک یہ کہ یہ چیز ’’توکل علی اللہ‘‘ کے خلاف ہے اور دوسرے یہ کہ اس میں سود شامل ہوتا ہے۔
جہاں تک ’’توکل علی اللہ‘‘ کا تعلق ہے‘ ہمارے یہ محترم بھائی توکل کا ایسا مفہوم پیش کرتے ہیں کہ جس سے یہ قوم اپاہجوں اور مفلوجوں کا گروہ بن کر رہ گئی ہے۔ ان کے پیش کردہ توکل علی اللہ کے مفہوم کی تردید تو روزمرہ کے واقعات کررہے ہیں۔ اگر توکل علی اللہ سے مراد یہ ہے کہ تم اپنے لئے کوئی حفاظتی تدبیر نہ کرو‘ کیونکہ رزق کی ذمہ داری اللہ نے اپنے اوپر لے رکھی ہے‘ تو یہ جو اس وقت دنیا کی اِتنی زیادہ آبادی رات کو بھوکی سوتی ہے اور ایک ایک قحط میں لاکھوں انسان بھوک سے مرجاتے ہیں یا فردِ کاسب (کمائی کرنے والے انسان) کی موت کے بعد‘ اس کے بیوی بچوں پر فاقے آنے شروع ہوجاتے ہیں ‘ تو اس وقت اللہ تعالیٰ کی یہ ذمہ داری کہاں چلی جاتی ہے؟
توکل علی اللہ کے معنی ہیں اللہ تعالیٰ کے تجویز کردہ نظام کی محکمیت پر پورا پورا اِعتماد ۔۔ یہ بھروسہ کہ اس نظام میں کبھی ایسا نہیں ہو سکتا کہ کوئی ذی حیات بھوکا رہ جائے۔ یہ اسی نظام کی محکمیت تھی جس کے پیش نظر حدیثِ مبارکہ ہےکہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا
اگر کسی بستی میں کوئی ایک فرد بھی رات کو بھوکا سوجائے تو اس بستی سے اللہ تعالیٰ کی حفاظت کی ذمہ داری ختم ہوجاتی ہے۔
یا جس ’’ذمہ داری‘‘ کی حضرت عمرؓ نے ان الفاظ میں تشریح کی تھی کہ
اگر دجلہ کے کنارے کوئی کتا بھی بھوک سے مرجائے تو بخدا عمرؓ سے ا س کی بھی باز پرس ہو گی۔
یہ تھا وہ نظام جس پر کامل بھروسہ کو ’’توکل علی اللہ‘‘ کہا گیا تھا۔
باقی رہا سود کا معاملہ ۔۔۔ اِس ضمن میں عرض ہے کہ ’’کارِ خیر‘‘ یا مسجد مدرسہ کی تمیر وغیرہ کے لئے جس قدر عطیات دئے اور لئے جاتے ہیں، اُس کے متعلق کبھی کسی نے غور کیا ہے کہ اس میں کس قدر حصہ سود کا ہوتا ہے؟ سود‘ موجودہ نظامِ سرمایہ داری کا خونِ رگِ حیات ہے۔ اس سے (اس نظام میں زندگی بسر کرنے والوں سے ) کس کو مفر ہو سکتا ہے؟

جو کچھ اوپرکہا گیا ہے اس کا ماحصل یہ ہے کہ موجودہ نظامِ معیشت سراسر غیر اسلامی ہے اور سود‘ انشورنس وغیرہ قسم کی اسکیمیں اس نظام کا لازمی جزو ہیں اور یقیناً غیراِسلامی۔ لہٰذا‘ جب تک ہم اس نظام کو گوارا کئے ہوئے ہیں‘ ہمیں اس شجرہ الذقوم کے برگ وبار کو بھی گوارا کرنا ہو گا۔
اور اگر ہم انہیں گوار نہیں کر سکتے اور رزقِ حلال کے متمنی ہیں تو اس کا علاج اس کے سوا کچھ نہیں کہ ہم موجودہ غیر قرآنی نظام کی جگہ ‘ قرآنی نظامِ معیشت رائج کریں۔ لیکن اگر ہماری روش یہی رہی کہ موجودہ نظام سرمایہ داری کو توعین مطابقِ اسلام قرار دیتے (یا سمجھتے) رہے اور اس کے برگ وبار کو حرام‘ تو یہ فریبِ نفس ہے جس سے عملی مشکلات کا حل نہیں مل سکتا۔ (ماخوذ)۔
* ۔۔۔ * ۔۔۔ *

Tuesday, August 06, 2013

Bahria Town invites PM Task Force to its power system

ISLAMABAD: The Bahria Town has invited the Prime Minister Task Force on Power to visit its towns in Rawalpindi, Islamabad and Lahore to review and evaluate in detail its grid stations and power generators constructed to produce its own electricity.

The prime minister had constituted a task force to end or reduce power crisis in the country. The Bahria Town spokesperson welcomed this task force and invited it to first visit their power generation system.

The Bahria Town has constructed its own power generators of 12MW in Rawalpindi and 9MW in Lahore to ensure 24-hour power supply to its residents. The cost of these power generators comes at Rs28 per unit however the Bahria Town was charging only Rs10 per unit from its customers including hospitals, educational institutions and houses and is bearing all losses in this regard by its own.The residents of Bahria Town have appreciated this facility and urged all other societies to follow the suit. While generation electricity by its own the Bahria Town is also saving 43 percent losses including 30 percent line losses, 10 percent maintenance cost and 3 percent billing recovery expenses.It is suggested that by following the Bahria Town system not only the loadshedding can be controlled but 100 percent billing recovery also can be achieved.

Courtesy: The News